اسٹیٹ بینک کے بارے میں 

بورڈ آف ڈائریکٹرز  


اسٹیٹ بینک آف پاکستان ایک خودمختار بورڈ آف ڈائریکٹرز کے تحت کام کرتا ہے، جو بینک کے معاملات کی عمومی نگرانی اور بینک کے معاملات و کاروبار کی سمت متعین کرنے کا ذمہ دار ہے۔ بورڈ کی صدارت گورنر ایس بی پی کرتے ہیں جبکہ یہ آٹھ غیر انتظامی ڈائریکٹرز اور وفاقی حکومت کے سیکریٹری فنانس پر مشتمل ہوتا ہے۔ بورڈ کے غیر انتظامی ڈائریکٹرز کا تقرر وفاقی حکومت کی جانب سے تین سالہ مدت کے لیے کیا جاتا ہے۔


(MPC)زری پالیسی کمیٹی


زری پالیسی کمیٹی بینک دولت پاکستان کی ایک خودمختار مجلس ہے جس کی ذمہ داری اسٹیٹ بینک کی زری پالیسی تشکیل دینا ہے۔ بالخصوص ایم پی سی پالیسی شرح سود کا تعین کرتی ہے اور زری پالیسی بیان منظور کرتی ہے۔ ایم پی سی دس اراکین پر مشتمل ہے: گورنر (صدرنشین)، بورڈ کے تین ارکان جنھیں بورڈ نامزد کرتا ہے، اسٹیٹ بینک کے تین سینئر ایگزیکٹوز، جنھیں گورنر نامزد کرتے ہیں، اور تین بیرونی ارکان ( معاشیات دان) جن کا تقرر اسٹیٹ بینک بورڈ کی سفارش پر وفاقی حکومت کرتی ہے۔ بیرونی اراکین کا تقرر تین سالہ مدت کے لیے کیا جاتا ہے۔


اسٹیٹ بینک کی انتظامیہ  


اسٹیٹ بینک کے گورنر بینک کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ہیں جو بورڈ کی جانب سے بینک کے معاملات کا انتظام سنبھالتے ہیں۔ گورنر کا تقرر صدر پاکستان تین سالہ مدت کے لیے کرتے ہیں جو ایک بار کے لیے قابل تجدید ہے۔گورنر کی معاونت کے لیے وفاقی حکومت ایک یا ایک سے زائد ڈپٹی گورنرز کا تقرر کرتی ہے جو کہ پانچ سال کی مدت سے زائد نہیں ہوسکتا۔ گورنر اور ڈپٹی گورنرز کے علاوہ ایگزیکٹو ڈائریکٹرز، اقتصادی مشیر اعلیٰ اور مختلف شعبوں کے ڈائریکٹر ز بھی اس انتظامی ڈھانچے کا حصہ ہیں۔